الصلوٰ ۃ والسلام علیک یا رسول اللہ الصلوٰ ۃ والسلام علیک یا حبیب اللہ
Subscribe: PostsComments

بزرگ کارکن محمد حنیف قادری عرف تا یا جی انتقال کر گئے

June 14, 2013

جب اُ ن کی وفات کے بارے میں اُن کے بیٹے محمد صدیق قادری سے پوچھا گیا تو انہوں نے کہا کہ ابا جان تہجد گزار تھے ۔روزانہ بوقت تہجد اُٹھ کر نمازِ تہجد ادا فرماتے اوراسکے بعدفجر تک ذکرِ الٰہی میں مشغول رہتے۔پڑھے لکھے نہ ہونے کی وجہ سے انہوں نے اپنے گھر کی دیوار پر اور بلب پر اسمِ ذات اللہ لکھوایا ہواتھا جسے دیکھتے دیکھتے سو جاتے تھے۔انہوں نے کہا کہ اباجی اکثر اوقات جیب میں کرایہ نہ ہونے کے باعث گھر سے آستانہ پرمحفل درودشریف میں شرکت کیلئے7کلومیٹرکا سفر پیدل طے کیا کرتے تھے۔محمد صدیق قادری نے مزید بتایا کہ اس دن معمول کے مطابق ابا جی بوقت تہجد اُٹھتے ہیں اور خلافِ معمول وضو کروانے کا کہتے ہیں ۔وضو کرنے کے بعد نمازِتہجد ادا کی اور تھوڑی دیر بعد اچانک طبیعت خراب ہوئی تو انہوں نے بوتل وغیرہ پینے کا کہا ۔بوتل پینے کے بعد وہ بستر پر لیٹ کر ذکر الٰہی میں مشغول ہو جاتے ہیں ۔کچھ دیر بعد نمازِ فجر ادا کرنے کیلئے قریبی مسجد میں جاتے ہیں اور واپسی پر بستر پر لیٹ کر دوبارہ قبلہ رخ ہوکرذکرِ الٰہی میں مشغول ہو جاتے ہیں اور کہتے ہیں کہ مجھے ذاکر ہی غسل دیں اور ذاکر ہی میری نمازِ جنازہ پڑھائیں ۔یہ باتیں کرنے کے بعد ابا جی دوبارہ قبلہ رخ ہو کر لیٹ جاتے ہیں ۔انکی بیٹی جب صبح ناشتہ لے کر آتی ہے تو پتہ چلتاہے کہ وہ اپنے خالقِ حقیقی سے جاملے ہیں ۔ محمد صدیق قادری ،محمد خالد قادری،بابامحمد رفیق قادری اور محمد صابر قادری نے تایا جی کو آخری غسل دیا ۔انہوں نے بتایا کہ تایا جی کا جسم پھولوں کی طرح نرم و نازک تھا۔نمازِ جنازہ سینئیر رہنما ASIمحمد شفیق قا دری نے پڑھائی ۔نمازِ جنازہ میں امیرِ فیصل آباد حاجی محمد سلیم قادری،ممبر مجلسِ شوریٰ حاجی محمد اویس قرنی سمیت ذمہ داران و ذاکرین کی کثیر تعداد نے شرکت کی ۔حاضرین نے اہلِ خانہ سے دلی تعزیت کی اور دعا کی اللہ تعالیٰ تایا جی کو اپنی جوارِرحمت میں جگہ عطا فرمائے اور لواحقین کو صبرِ جمیل عطا فرمائے۔
جاری کردہ
شعبہ نشر وا شاعت فیصل آباد

14061 14062 14063 14064 14065 14066 14067

Facebooktwittergoogle_plusredditpinterestmailby feather
انجمن سرفروشان اسلام (رجسٹرڈ) پاکستان