الصلوٰ ۃ والسلام علیک یا رسول اللہ الصلوٰ ۃ والسلام علیک یا حبیب اللہ
Subscribe: PostsComments

خصو صی محفل ِپاک بسلسلہ شب برأت فیصل آباد

May 23, 2016

عالمی روحانی تحریک انجمن سرفروشان ِاسلام (رجسٹرڈ) پاکستان ،فیصل آباد کے زیر اہتمام آستانہ عالیہ فیصل آباد پر شب برأت کے سلسلہ میں خصوصی محفل ِپاک کا انعقاد کیا گیا ۔اس سے قبل صلوۃ التسبیح پڑھائی گئی ۔بعد ازاں قبلہ مرشد ِپاک کے روحانی خطاب پر مبنی ویڈیو پروجیکٹر(بڑی سکرین)پر دکھائی گئی ۔اسکے بعد محفل ِپاک کا حمد ِباری تعالیٰ سے آغاز کیا گیا جس کی سعادت محمد صابر قادری نے حاصل کی ۔محبوب ِدوجہاں ﷺکی بارگاہ ِبے کس پناہ میں ہدیہء عقیدت و محبت کے گلدستے عبدالعزیز قادری ،عبدالمنان قادری اور منصب علی قادری نے پیش کئے۔محمد جمیل قادری نے منقبت ِغوثیہ ؓ پیش کی ۔قلندر پاک ؒاورمرشد ِپاک حضرت سیًدناریاض احمد گوھر شاھی مدظلہ العالی کی بارگاہ ِاقدس میںعبدالعزیز قادری اورعبدالمنان قادری نے ہدیہء عقیدت پیش کیا۔اجازت ِذکر ِقلب مرکزی مشیر حاجی محمد اویس قادری نے دی ۔حاجی محمد اصغر قادری نے حلقہء ذکر ِلطائف ترتیب دیا ۔درودوسلام کے بعد بخشش و مغفرت اور ملک ِخداداد پاکستان کی ترقی و خوشحالی کے لئے خصو صی دعائیں کی گئیں۔محفل ِپاک کے اختتام پر تمام شرکاء محفل کے لئے سحری کا خصو صی انتظام کیا گیا تھا۔
اس موقع پر نظامت کے فرائض سرانجام دیتے ہو ئے محمد افضال قادری نے کہا کہ یہ بہت ہی بابرکت اور مقدس رات ہے ۔اس کی اہمیت کا اندازہ اس ایک واقعے سے لگا یا جا سکتا ہے ۔ایک دفعہ حضور ِپاک صاحب ِ لولاک ﷺکچھ پریشان تھے ۔اللہ تعالیٰ نے پوچھا کہ اے میرے پیارے محبوبﷺ!تو کیوں پریشان ہے ۔عرض کی ۔اے میرے مولا!میری امت کے لوگوں کی عمریں بہت مختصر ہیں ۔قلیل ہیں ۔بنی اسرائیل کے لوگوں کی عمریں بہت زیادہ تھیں ۔ایک ایک ہزار سال کے قریب تھیں ۔ان کی عبادت اور پرہیز گاری بہت زیادہ تھی ۔میری امت کس طرح عبادت و ریاضت اور تقویٰ اور پرہیز گاری میں اُن سے بڑھ سکتی ہیں ۔اللہ کی طرف سے حکم ہو تاہے ۔اے میرے دلارے محبوبﷺ!تومغموم کیو ں ہوتا ہے ۔میں تمہاری امت کو ایسی بابرکت اورحمتوں بھری راتیں دوں گاکہ جن میں عبادت و ریاضت کرنے والوں کی ایک رات بنی اسرائیل کے دور میں کی جانے والی عبادت و ریاضت سے ہزار درجہ بہترہے ۔
مرکزی مشیر محمد شفیق قادری نے کہا کہ اس رات کو مختلف ناموں سے پکارا جاتا ہے ۔مثلاًتوبہ کی رات،جہنم سے آزادی کی رات وغیرہ۔رمضان المبارک کے علاوہ رحمت کائناتﷺسب سے زیادہ روزے شعبان میں رکھتے تھے ۔سیًدہ عائشہ صدیقہ ؓپوچھتی ہیں ۔یارسول اللہﷺ!اس کی کیا وجہ ہے ؟تو حضور پاک ﷺنے جواب دیا ۔اس ماہِ مبارک میں اُن لوگوں کے نام لکھ دئیے جاتے ہیں جنہوں نے اس دنیا سے جانا ہو تا ہے ۔میں یہ چاہتا ہوں کہ اگر میرا نام آئے تو روزے کی حالت میں جائوں ۔حضور ﷺکو روزوں کی حاجت نہیں تھی اور نہ ہی عبادت و ریاضت کی ۔یہ صرف امت کی تلقین کے لئے تھا۔یہ مقدس رات اپنے گناہوں سے بخشش کی رات ہے ۔اللہ سے رزق مانگنے کی رات ہے اور اپنی بیماریوں سے عافیت مانگنے کی رات ہے ۔۔
موسیٰ ؑ!کے دور میں ایک دفعہ قحط پڑ گیا ۔سب نے اکٹھے ہو کر اللہ کی بارگاہ میں دعا کی ۔یااللہ!بارش برسالیکن بارش نہیں ہو رہی ۔حضرت موسیٰ ؑاللہ کی بارگاہ میں عرض کرتے ہیں کہ یااللہ!سب گڑ گڑاکر دعاکررہے ہیں ۔بارش کیوں نہیں ہو رہی ۔اللہ نے فرمایا۔ان لوگوں میں سے ایک ایسا گنہگار موجود ہے کہ جس کی وجہ سے تمہاری دعا قبول نہیں ہو رہی ۔اُس کو نکال دو ۔تمہاری دعا قبول ہو جائے گی اور بارش ہو جائے گی ۔موسیٰ ؑ!لوگوں سے مخاطب ہو کرفرمانے لگے کہ کون گنہگار اور بد بخت ایسا ہے کہ جس کی وجہ سے بارش رکی ہو ئی ہے اور اللہ تعالیٰ دعا کو قبول نہیں کر رہا۔جو شخص گنہگار تھا وہ کھڑا نہیں ہوا لیکن دل میں اتناشرمندہ ہوا ،اتنا شرمندہ ہواکہ دل کے آنسوئوں سے اللہ کی بارگا ہ میں رویاکہ یااللہ!آج مجھے رسوائی سے بچالے ۔یااللہ !میری وجہ سے بارش نہیں ہو رہی ۔مولا !مجھے رسوائی سے بچالے ۔تھوڑی ہی دیر گزری تھی کہ بارش شروع ہو گئی۔بارش برسی ۔موسیٰ ؑ!بڑے حیران ہوئے کہ لوگوں میں سے اُٹھ کر کوئی بھی باہرنہیں گیااور بارش بھی ہو گئی ۔اللہ کی بارگاہ میں عرض کی ۔مولا !تو نے فرمایا تھا کہ ایک بندہ ایسا ہے جسکی وجہ سے بارش نہیں ہو رہی ۔مولا کوئی بندہ اُٹھ کے نہیں گیا۔یہ ماجرا کیا ہے ؟اللہ نے فرمایا۔پیارے موسیٰ ؑ!جس بندے کی وجہ سے بارش نہیں ہو رہی تھی ۔اُس نے صدق ِدل سے میری بارگاہ میں توبہ کر لی ہے جس کی وجہ سے بارش شروع ہو گئی ہے ۔عرض کی ۔مولا !وہ کون ہے ۔اللہ نے فرمایا ۔جب وہ گنہگار تھا تب بھی پرد ے میں تھا۔اب جبکہ اُس نے دل سے توبہ کر لی ہے ۔اب بھی وہ پردے میں ہے ۔بندے کا اللہ کے ساتھ تعلق ایسا ہو نا چاہیے کہ دنیا نہ جانے تو اس اللہ سے لَو لگانے کی کوشش کریں ۔قرآن ِمجید میں ہے ۔اپنے رب کے اسم کا ذکر کر ۔سب سے ٹوٹ کر اُس کا ہو جائے ۔یہی انجمن سرفروشان ِاسلام کا پیغام ہے اپنے دلوں سے اللہ اللہ کرواور ذکر ِالٰہی میں اس قدر مستغرق ہو جائو کہ تمہیں دنیا جہاں کہ خبر نہ ہو اور تمہاری اللہ سے سچی اور پکی دوستی ہو جائے ۔رب سے دعا ہے کہ وہ ہمیں اپنے نام لیوائوں میں شامل کر لے اور ہمارے دلوں کو اپنے ذکر سے جاری و ساری کر دے اور ہمارے سینوں میں عشق ِمصطفی ﷺموجزن فرمائے ۔آمین۔

Facebooktwittergoogle_plusredditpinterestmailby feather
انجمن سرفروشان اسلام (رجسٹرڈ) پاکستان